آئی سی سی کا کرپشن کی روک تھام کے لیے انٹرپول سے مدد کا فیصلہ

  انٹرنیشنل کرکٹ کونسل نے کرکٹ میں کرپشن کی روک تھام کے لیے انٹرپول سے الحاق کا عندیہ دے دیا ہے۔
 بدھ کے روز  دبئی میں ہونے والے  آئی سی سی کی گورننگ باڈی کے اجلاس میں اس بات پر زور دیا گیا کہ کرکٹ میں کرپشن (میچ فکسنگ یا اسپاٹ فکسنگ) کے انسداد کیلئے سخت اقدامات کئے جائیں گے جس کے لئے انٹرپول سے بھی مدد لی جائیگی۔
رائٹر نیوز ایجنسی کے مطابق انٹرنیشنل کرکٹ کونسل  کے اینٹی کرپشن یونٹ کے جنرل منیجر ایلکس مارشل نے گزشتہ ہفتے انٹرپول کے حکام سے لیون میں ملاقات کی ہے۔ ایلکس مارشل نے کہا ہے کہ آئی سی سی نے کرپشن کی کارروائیاں روکنے کیلئے سیکیورٹی اداروں اور ایجنسیوں سے مکمل رابطے میں ہیں لیکن آئندہ کیلئے انٹرپول سے بھی مدد لی جائیگی۔ انٹرپول جیسا اہم ادارہ دنیا کے 194ممالک سے منسلک ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ ہماری پوری توجہ کھلاڑیوں کی تربیت اور کرپشن اور بدعنوانی کی روک تھام پر ہوگی۔ ہماری تحقیقاتی کمیٹیاںاگر کھلاڑیوں میں مجرمانہ غفلت کا عنصر دیکھیں گی تو انٹرپول کی مدد سے تحقیقات کا دائرہ بڑھادیں گی۔ گزشتہ برسوں میں کر کٹ کے کھیل مین کرپشن کے کئی ایک کیسز سامنے   سامنے آئے ہیں۔
2011ءمیں پاکستانی کرکٹر سلمان بٹ، محمد آصف اور محمد عامر انگلینڈ کے خلاف ٹیسٹ میچ میں سپاٹ فکسنگ میں ملوث پائے گئے۔ رواں سال کے شروع میں آئی سی سی کو سری لنکا میں کچھ کرکٹرز کے متعلق بدعنوانی کی خبریں بھی ملی تھیں۔
 اس کے بعد تحقیقاتی کمیٹی سے تعاون نہ کرنے کی پاداش میں سری لنکا کے سابق کپتان اور چیئرمین سلیکشن کمیٹی جے سوریا پر دو سال کی پابندی عائد کر دی گئی۔
واضح رہے کہ انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کی زیر نگرانی 30مئی 2019ءسے انگلینڈ میں کرکٹ ورلڈ کپ کا آغاز ہو رہا ہے۔ 

اپنا تبصرہ بھیجیں