جنرل اسد درانی کی پنشن اور مراعات روک دی گئیں

پاکستانی فوج کے ترجمان میجرجنرل آصف غفور نے کہا ہے کہ ہندکی خفیہ ایجنسی را کے سابق سربراہ کے ساتھ مل کر کتاب لکھنے پرجنرل ریٹائرڈ اسد درانی پر فوجی ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کے الزامات ثابت ہوگئے ہیں جس پر ان کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے ان کی پنشن اور مراعات روک دی گئی ہیں ۔ 
 جمعہ کو راولپنڈی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے فوج کے شعبہ تعلقات عامہ کے سربراہ میجر جنرل آصف غفور نے کہا کہ جاسوسی کے الزامات پر2 فوجی افسران زیرحراست ہیں اور ان کے خلاف فیلڈ کورٹ مارشل کی کارروائی جاری ہے ۔ 
انہوں نے کہا کہ جنرل ریٹائرڈ اسد درانی کے خلاف انکوائری کی فائنڈنگز سامنے آ گئی ہیں ۔ کتاب لکھنے کے لئے انہوں نے فوج کے قانون میں دیا گیا طریقہ کار نہیں اپنایا۔ اس طرح جنرل درانی نے ملٹری کوڈ آف کنڈکٹ کی خلاف ورزی کی جس پر ان کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے پنشن اور مراعات روک دی گئی ہیں۔ ان کا نام حکومت نے ایگزٹ کنٹرول فہرست میں شامل کیا تھا ۔ 
خیال رہے کہ جنرل ریٹائرڈ اسد درانی نے ہند کی خفیہ ایجنسی را کے سابق سر براہ اے ایس دُلت کے ساتھ مل کر دی’ اسپائی کرانیکلز‘ کے نام سے کتاب لکھی تھی جس پر ا نہیںگذشتہ سال مئی میں فوج کے ہیڈکوارٹر راولپنڈی میں وضاحت کے لئے طلب کیا گیا تھا۔ بعد ازاں فوج کے ترجمان نے بتایا تھا کہ جنرل درانی کے خلاف انکوائری شروع کی گئی ہے ۔ 

اپنا تبصرہ بھیجیں