عوامی شکایات کے بر وقت ازالے کے ذریعے انہیں ریلیف فراہم کرنے کی ہر ممکن کوشش کی جائے , ڈپٹی کمشنر راولپنڈی

راولپنڈی(سنہرا دور): ڈپٹی کمشنر راولپنڈی ڈاکٹر عمر جہانگیر نے انتظامیہ افسران کی ماہانہ کارکردگی رپورٹ کا تفصیلی جائزہ لیتے ہوئے ہدایت کی کہ عوامی شکایات کے بر وقت ازالے کے ذریعے انہیں ریلیف فراہم کرنے کی ہر ممکن کوشش کی جائے۔تمام اسسٹنٹ کمشنر اپنی تحصیلوں میں اشیاء خوردنوش کی مناسب قیمتوں پر دستیابی،صحت،تعلیم کی مناسب سہولیات کی فراہمی اور پرائم منسٹر پورٹل پر موصول ہونے والی شکایات کے فوری ازالے کا بندوبست کریں نیز بجلی چوری میرج ہالز ایکٹ پر عملدرآمد،پیٹرول و سی این جی سٹیشنزز کی باقاعدہ چیکنگ کو بھی یقینی بنایا جائے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے انتظامیہ کار کردگی کے لیے منعقدہ ماہانہ جائز ہ اجلاس کی صدارت کے دوران کیا۔اجلاس میں ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر (ریونیو) میاں بیزاد عادل،اے ڈی سی (فنانس) نوشین سرور،اے ڈی سی(جنرل)ملیحہ جمال،اسسٹنٹ کمشنر(کینٹ) زاہدخان،اے سی (صدر) ا احمد حسن رانجھا،اے سی (گوجرخان) غلام مصطفی،اے سی (مری) امتیاز کچھی،اے سی (کلرسیداں) میر گیلانی،اے سی (ٹیکسلا)سدرہ انور اور انڈر ٹریننگ اسسٹنٹ کمشنر زکی بڑی تعداد نے شرکت کی۔ اس موقع پر تمام سسٹنٹ کمشنرز کی جانب سے ماہ جنوری میں اپنی اپنی تحصیلوں میں کئے جانے والے اقدامات کی تفصیلی رپورٹ پیش کی گئی۔اسسٹنٹ کمشنر (کینٹ) زاہد خاں نے کہا کہ راولپنڈی کینٹ میں غیر معیاری ایل پی جی کی چیکنگ کے دوران خلاف ورزی کرنے 8اسٹیشنزمیں سے 2کو سیل کردیا گیا اور کل 30500روپے جرمانہ کیا گیا۔ پرائس چیکنگ کے دوران کینٹ ایریا میں 106 جگہیں وزٹ کی گئی اور 2,51,000روپے کا جرمانہ کیا گیا،بجلی چوری کے حوالے سے311شکایات موصول ہوئیں جن میں سے 94 افرادکو گرفتارکیا جبکہ باقی کے خلاف کاروائی جاری ہے۔ انہوں نے بتایا کہ راولپنڈی میں موجود پارکس کی فٹنس رپورٹ بھی حاصل کی جاچکی ہے۔احمد حسن رانجھا اے سی (صدر) کی جانب سے جنوری 2019میں بجلی چوری کی چیکنگ کے لیے 33 جگہوں پرچھاپے مارے گئے اور ایک ایف آئی آر کے علاوہ 1,75,000روپے کے جرمانے عائد کیے گئے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں