’پاکستان بناؤ سرٹیفکیٹس‘ کے خدوخال

اسلام آباد (اے پی پی) وزیراعظم عمران خان کی جانب سے جاری کردہ ’پاکستان بناؤ سرٹیفکیٹس‘ کے نمایاں خدوخال یہ ہیں۔

٭مالیت:کسی بالائی حد کے بغیر 5؍ ہزار امریکی ڈالر

٭جاری کنندہ:اسٹیٹ بینک آف پاکستان

٭نوعیت:بغیر رسید

٭مدت میعادتین اور پانچ سال

٭ اہل سرمایہ کار :سی این آئی سی، نائیکوپ اور پی او سی کے حامل کنندگان

٭ فنڈز کا ذریعہ: ترسیلات زر بذریعہ باضابطہ بینکاری ذرائع، بیرون ملک برقرار شدہ اکاؤنٹ سے

٭ شرح منافع: تین سالہ سرٹیفکیٹ پر 6.25؍ فیصد سالانہ پانچ سالہ سرٹیفکیٹ پر 6.75فیصد سالانہ

٭ ادائیگی منافع:نیم سالانہ، سرمایہ کار کے نامزد کردہ رہائشی ملک یا پاکستان میں برقرار رکھے گئے امریکی ڈالر اکاؤنٹ میں

٭ انکیشمنٹ:پاکستانی روپے میں کسی بھی وقت اجازت ہو گی وزارت خزانہ کی طرف سے نوٹیفکیشن کے مطابق کٹوتی کے بعد امریکی ڈالر میں اجازت ہو گی

٭واپس لینے کا عمل:امریکی ڈالر میں، سرمایہ کار کے نامزد کردہ رہائشی ملک یا پاکستان میں برقرار رکھے گئے امریکی اکاؤنٹ میں پاکستانی روپے میں، موجود شرح مبادلہ میں پاکستان میں
سرمایہ کار کے نامزد کردہ پاکستانی روپیہ اکاؤنٹ میں ایک فیصد کے مساوی اضافی رقم کے ساتھ

٭ٹیکس:ودہولڈنگ ٹیکس سے مستثنیٰ

٭زکوۃٰ:کوئی لازمی کٹوتی نہیں ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں