چائے کا زائداستعمال انسانی صحت کیلئے مضر

اس کا اعتدال سے استعمال انسانی صحت کیلئے مفید ہے ، پٹھوں اور دماغ کا دوران خون تیز ہونے سے جسم میں چستی محسوس ہوتی ہے

لاہور (سنہرادور آن لائن ) چائے دو قسم کی ہوتی ہے ایک سبز اور دوسری سیاہ۔سبز چائے میں خوشبو زیادہ ہوتی ہے۔ چائے کا مزاج گرم خشک بدرجہ دوم ہوتا ہے اور مقدار خوراک تقریباً تین ماشہ ہوتی ہے۔ اس کا ذائقہ قدرے تلخ ہوتا ہے۔
چائے کے فوائد و نقصانات: 1- چائے کے پینے سے تھکان دور ہو جاتی ہے۔ 2- بواسیر‘ خفقان‘ خون کے دبائو والے مریضوں کیلئے چائے مضر ہو سکتی ہے۔ 3- چائے کو بنانے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ پانی کو ابال کر چائے دانی میں ڈال لیں۔ پھر اس میں چائے کی پتی حسب ضرورت ڈال دیں۔ دو منٹ بعد استعمال میں لایا جائے۔ زیادہ دیر تک پکی ہوئی چائے پڑی رہنے سے قابض ہو جاتی ہے۔ 4- چائے کی کثرت انسان کو ضدی اور چڑچڑا بنا دیتی ہے۔ 5- گرم چائے جوڑوں کو توانائی بخشتی ہے۔ 6- چائے کے کثرت استعمال سے دل کے امراض پیدا ہوسکتے ہیںاور معدہ خراب ہو جاتا ہے۔ 7- چائے کے کثرت استعمال سے بھوک زائل ہو جاتی ہے۔ بدہضمی‘ اختلاج القلب‘ ذکاوت حس‘ عصبی ردیں اور ہسٹریا کے دورے وغیرہ کے عوارض پیدا ہو جاتے ہیں۔
8- سبز چائے میں اگر لیموں کا رس نچوڑ کر پیا جائے تو بلغم کو دور کرتی ہے۔ 9- سرد اور بلغمی مزاج والوں کیلئے اس کا اعتدال سے پینا کسی حد تک مفید ہے۔ 10- دماغ کا دوران خون تیز ہو جاتا ہے جس سے حواس میں چستی محسوس ہونے لگتی ہے۔ 11- نیند اور غنودگی کے غلبے میں چائے کا استعمال مفید ہے۔ 12- اگر خشکی کے باعث بار بار پیاس لگے تو چائے کا استعمال مفید ہے۔ 13- چائے کے استعمال سے مثانہ کمزور ہو جاتا ہے اور بار بار پیشاب آنے کی شکایت ہو جاتی ہے۔ 14- چائے کی پتی کی پلٹس زخمی آنکھ پر باندھنا بے حد مفید ہوتا ہے۔ 15- چائے کی کثرت چہرے کی رنگت پر بھی اثرانداز ہوتی ہے اور چہرہ زرد ہو جاتا ہے۔ 16- چائے کے مسلسل استعمال سے قوت سماعت کمزور ہو جاتی ہے۔ کانوں میں مختلف قسم کی آوازیں پیدا ہوتی ہیں۔ کوشش کرنی چاہئے کہ چائے کا مناسب مقدار میں استعمال کیا جائے۔ آج کل مہمان داری میں چائے ایک لازمی جزو کی حیثیت رکھتی ہے۔ ہمیں چاہئے کہ اپنی صحت برقرار رکھنے کیلئے اسے اعتدال سے استعمال کریں۔

کیٹاگری میں : صحت

اپنا تبصرہ بھیجیں