کرکٹ میں فکسنگ پر ایک اور اسٹنگ آپریشن

عرب ٹی وی کی رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ دو سال میں بھارتی ٹیم کے تین ٹیسٹ میچوں کے مختلف سیشنز فکس کیے گئے، انگلینڈ کے3،آسٹریلیا کے2 کھلاڑیوں کے ملوث ہونے کا انکشاف ہوا ۔

انگلش کرکٹرز نے الزامات رد کردئیے ، آسٹریلوی کرکٹرز نے ردعمل دینے سے انکارکردیا۔

رپورٹ کے مطابق ابھی تک کسی بھارتی کرکٹر کا نام سامنے نہیں آیا، فکسرز کیوریٹر اور کھلاڑیوں کو کس طرح رشوت دیتے ہیں ، کس طرح کنکشن استعمال کر تے ہیں ، سب سامنے آگیا۔

پورا میچ یا میچ کا کوئی حصہ فکس کرکے اپنی مرضی کا نتیجہ کیسے حاصل کیا جاتاہے ؟فکسرز کس طرح کیوریٹر اور کرکٹرز کو رشوت دیتے ہیں؟ عرب ٹی وی کے صحافی نے اسٹنگ آپریشن میں کچا چٹھا کھول کر رکھ دیا۔

رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ گزشتہ سال 16 سے20 دسمبر کے درمیان چنئی میں بھارت انگلینڈ ٹیسٹ میچ فکس تھا ، بھارت اور سری لنکا کے درمیان گال میں جولائی 2017میں کھیلا گیا ٹیسٹ بھی فکس میچ تھا ، مارچ 2017میں رانچی میں ہوا آسٹریلیا بھارت ٹیسٹ بھی فکس تھا ،ان تینوں ٹیسٹ میچز کے مخصوص سیشنز کھلاڑیوں اور فکسرز کے درمیان طے شدہ تھے۔

رپورٹ کے مطابق ان میچز میں اب تک کسی بھارتی کرکٹر کا نام سامنے نہیں آیا، بھارت انگلینڈ چنئی ٹیسٹ میں انگلینڈ کے تین کھلاڑی فکسنگ میں ملوث رہے ،رانچی کے ٹیسٹ میں آسٹریلوی ٹیم کے دو کھلاڑی ملوث پائے گئے ، رپورٹ پر انگلش کھلاڑیوں نے الزامات مسترد کردیئے جبکہ آسٹریلوی کھلاڑیوں نے ردعمل دینے سے انکار کردیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں