’کشیدہ صورتحال پر عالمی برادی سے رابطے میں ہیں‘

دفترخارجہ کا کہنا ہے کہ کشیدہ صورتحال پر پاکستان اور بھارت عالمی برادی سے رابطے میں ہیں،اس موقع پر کس ملک کا کیا کردارہوسکتا ہےوہ واضح نہیں۔

ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر فیصل نے کہا ہے کہ جن ممالک نےدہشتگردی کی بات کی ان پرپاکستان نےپوزیشن واضح کردی ہے،اگردہشتگردی کاکوئی وجودتھابھی توبھارت کوبین الاقوامی سرحدکی خلاف ورزی کی اجازت نہیں،اگر اس کا کوئی قانونی جواز گھڑا جائے تو پھر پاکستان بھی کل کسی پرحملہ کرسکتا ہے۔

ڈاکٹر فیصل نےکہا کہ جموں وکشمیرہی بنیادی مسئلہ ہے، کوئی بھی بات چیت اسی تناظر میں ہوتی ہے اور ہوگی ۔ معصوم کشمیریوں پر ہونے والے مظالم سےاقوام متحدہ کو بھی آگاہ کریں گے ۔

ترجمان دفترخارجہ کا کہنا ہے کہ موجودہ صورتحال پر اب بھارت کے اندر سے آوازیں اٹھ رہی ہیں ، بی جے پی کے لوگ کہتےہیں 22 سیٹوں کیلئےخطے کو جنگ میں دھکیلا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نےپہلے بھی کہا بھارت تباہی کےراستےپر ہے۔ پاکستان اپنے دفاع کیلئے کسی کی طرف نہیں دیکھ رہا ۔ پاکستان اپنےعوام اورافواج کی طرف دیکھ رہا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں