کوہستان وڈیو اسکینڈل: ملزمان کا لڑکیوں کے قتل کا اعتراف

کوہستان وڈیو اسکینڈل کا6سال بعد ڈراپ سین ہوگیا، گرفتار 4ملزمان نے لڑکیوں کے قتل کا اعتراف کر لیا۔

ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر (ڈی پی او) افتخار خان کے مطابق گرفتار ملزمان عمر خان، مولانا حبیب الرحمان، سمیر اور شبیر نے اعترافی بیان میں کہا ہے کہ 3لڑکیوں کو فائرنگ کر کے قتل کیا،2 زندہ ہیں، لڑکیوں کی لاشیں نالہ چوڑ میں بہا دی تھیں۔

ڈی پی او کا کہنا ہے کہ دیگر 8ملزمان کی گرفتاری کے لئے چھاپے مارے جارہے ہیں۔

واضح رہے کہ 2012 میں وائرل ہونے والی ویڈیو میں دو بھائیوں کو رقص کرتے اور 5 لڑکیوں کو تالی بجاتے دیکھا گیا تھا، جس کے بعد مبینہ طور پر لڑکیوں کو قتل کر دیا گیا تھا اور ویڈیو میں نظر آنیوالے لڑکوں کے 3 بھائی بھی قتل کر دیئے گئے تھے۔

سابق چیف جسٹس افتخار چوہدری نے 7 جون 2012ء کو واقعے کا ازخود نوٹس لیتے ہوئے 17جولائی 2012ء کو فیکٹ فائنڈنگ مشن تشکیل دیا تھا، جس کے بعد مشن نے کوہستان جاکر واقعے کی تحقیقات کیں اور 20جولائی 2017ء کو اپنی رپورٹ جمع کرائی تھی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں