ہم نے کسی کی پراکسی بننے سے انکار کر دیا ہے، خواجہ آصف

وزیر خارجہ خواجہ آصف نے کہا ہے کہ پاکستان کسی اور ملک اور طاقت کے مفادات کا تحفظ نہیں کرے گا، ہم نے کسی کی پراکسی بننے سے انکار کردیا ہے

قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے خواجہ آصف نے کہا کہ ہمارا دشمن سمندر پار سے آکر شام، افغانستان اور دیگر ممالک سے خون کی ہولی کھیل رہا ہے، مسلم امہ کا شیرازا بکھیرا جارہا ہے اور مسلمان ممالک کے حکمران دشمنوں کے سہولت کاربنے ہوئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اگر ایران اور سعودی عرب میں اختلافات ہیں تو اس کے خاتمے کے لیے دعاگو ہیں لیکن ہم نے کسی کی پراکسی بننے سے انکار کردیا ہے، ہم نے یمن کی جنگ میں شرکت نہیں کی، نہیں چاہتے کہ امت میں انتشارہو۔

وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ ہم اس لئے ہدف ہیں کہ دنیا کا ایک عام مسلمان چاہتا ہے کہ پاکستان آکرہمیں بچائے، سعودی عرب کی اندرونی سیکیورٹی کی ذمہ داری قبول کی ہے، سعودی عرب ہمارا دوست ہے لیکن ہم نے ان کے اندرونی معاملات میں مداخلت نہیں کی، پاکستان کسی اور ملک اور طاقت کے مفادات کا تحفظ نہیں کرے گا، پاکستان صرف اپنے وطن کے مفادات کا تحفظ کرے گا۔

خواجہ آصف نے مزید کہا کہ ہمارے حکمرانوں نے پاکستانی مفاد کے لیے نہیں بلکہ اپنے ذاتی مفاد کے لیے سمجھوتا کیا، مقتدر لوگوں نے حکمرانی کی خاطر ملک بیچا، ہم نے میڈ ان امریکا جہادلڑا اور جہادی بنائے، ہم نے اپنا کیا حال کرلیا ہے؟ اپنے گریبان میں جھانکنا چاہیے۔

ان کا کہنا تھا کہ امریکا چاہتاہے کہ پاکستان ان کی پراکسی بنے لیکن پاکستان امریکا کی پراکسی کبھی نہیں بنے گا، نائن الیون کےبعد ہم نےپھروہی غلطی دہرائی جس کا آج خمیازہ بھگت رہے ہیں، مرواتا کوئی اور ہے لیکن آلہ قتل ہمارے ہاتھ ہوتا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں