پاکستان کو دراصل گوادر بندرگاہ سے کتنی رقم ملے گی اور کتنی رقم چین رکھے گا؟ پہلی مرتبہ اصل حقیقت سامنے آگئی

اسلام آباد (سنہرادور آن لائن) پاک چین اقتصادی راہداری منصوبے اور گوادر کو بنیاد بنا کر دشمن دونوں ممالک کے تعلقات میں دراڑ ڈالنے کی کوشش کرتے رہتے ہیں اورآمد ن کو بنیاد بنا کر بھی طرح طرح کے پراپیگنڈے کرتے ہیں لیکن اب اس کی حقیقت سامنے آگئی ہے اور چینی سفارتخانے کے اعلیٰ عہدیدار نے واضح کیا ہے کہ پاکستان کیساتھ انتہائی مناسب معاہدہ ہوا ہے ، پاکستان کو منافع کی بجائے مجموعی آمدن سے حصہ ملے گا جبکہ گوادر بندرگاہ 9سال بعد منافع دینا شروع کرے گی ۔
پاکستان میں چینی سفارتخانے کے ڈپٹی چیف آف مشن لیجئن ژہاﺅ نے اپنے ایک ٹوئیٹ میں واضح کیا کہ” معاہدے کے مطابق پاکستان کو گوادر پورٹ کی آمدن کا 9فیصد اور فری زون سے آمدن کا 15فیصد حصہ ملے گا، پاکستان کو اچھی ڈیل مل گئی ہے جو کہ منافع کی بجائے مجموعی آمدن سے حصہ وصول کرے گا جبکہ اس کا منافع 9سال بعد ہی شروع ہوگا ، بنیادی طورپر یہ منصوبہ ہی بوٹ (خود تعمیرکریں اور چلائیں) منصوبہ ہے ، پاکستان نے کچھ خرچ بھی نہیں کیا“۔

یادرہے کہ یہ پاکستان کو منافع کی بجائے آمدن سے ہی حصہ ملے گا کیونکہ فوری طورپر پورٹ کے آپریشنل ہونے کے باوجود بھی منافع ممکن دکھائی نہیں دیتا، بندرگاہ 9سال تک خسارے میں رہے گی لیکن پاکستان کو پھر بھی رقم ملتی رہے گی ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں