پی ٹی اے کی جانب سے ٹک ٹاک کو نوٹس دینے کے معاملے پر ٹک ٹاک کا موقف سامنے آگیا

پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی (پی ٹی اے) کی جانب سے ٹک ٹاک کو نوٹس دینے کے معاملے پر ٹک ٹاک کا موقف سامنے آگیا۔

ٹک ٹاک ترجمان کا کہنا ہے کہ ٹک ٹاک کی اوّلین ترجیح قانون کی پاسداری کے ساتھ محفوظ ماحول پیدا کرنا ہے۔

ترجمان ٹک ٹاک نے مزید کہا کہ غیرمناسب مواد کی شناخت اور نظرثانی کے لیے ٹیکنالوجیز اورحکمت عملی اپنائی جاتی ہے، معاشرتی اقدار کی خلاف ورزی کرنے والے اکاؤنٹس پر پابندی لگا دی جاتی ہے۔ صارفین کو کنٹرولز، تجزیاتی سہولیات اور رازداری کے اختیارات دیے جاتے ہیں۔

ترجمان ٹک ٹاک کا کہنا تھا کہ 98 فیصد ناموزوں ویڈیوز کو بروقت شناخت اور شکایت پر پہلے ہٹا دیا جاتا ہے۔ 2019 میں 37 لاکھ سے زائد غیر مناسب ویڈیوز کو روکا جا چکا ہے۔

ترجمان نے بتایا کہ متعلقہ حکام سے مذاکرات بھی بڑھائےجار ہے ہیں تاکہ پالیسیوں سے آگاہ رہیں۔

واضح رہے کہ چند روز قبل پاکستان ٹیلی کام اتھارٹی نے سوشل میڈیا ایپ ٹک ٹاک کو حتمی وارننگ جاری کی تھی، ٹک ٹاک پر غیراخلاقی مواد ہونے پر پہلے بھی وارننگ جاری کی گئی تھی۔

پی ٹی اے حکام کا کہنا ہے کہ مختلف طبقات کی جانب سے ٹک ٹاک پر غیر اخلاقی ویڈیوز کی شکایات مل رہی ہیں۔ وارننگ پر ٹک ٹاک کی جانب سے تحریری جو اب تسلی بخش نہیں ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں