حکومت معاہدے کی پاسداری کرے ورنہ ۔۔۔! لاہور میں تحریک لبیک کا دھرنا، بات بڑھ گئی،خادم حسین رضوی نے دھماکہ خیز اعلان کردیا

لاہور (این این آئی): تحریک لبیک یارسول اللہ کی ؐمرکزی شوریٰ نے مذاکراتی ٹیم کی جانب سے پیشرفت کی یقین دہانی پر آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان آئندہ دو روز کے لئے موخر کر دیا ،داتا دربار کے باہر دھرنا جاری رہے گا اور کل(جمعہ ) کے روز داتا دربار چوک میں بعد نماز عصرتاجدار ختم نبوت کانفرنس ہوگی جس میں سربراہ تحریک لبیک یارسول اللہ علامہ خادم حسین رضوی آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کریں گے ۔ تفصیلات کے مطابق داتا دربار کے سامنے تحریک لبیک یارسول اللہ کا دھرنا مسلسل تیسرے روز بھی جاری رہا جس میں شریک کارکن ’’غلامی رسول میں موت بھی قبول ہے، لبیک یا رسول اللہ ، فیض آباد معاہدے کو پورا کرو کے نعرے ، وعدہ خلافی نہ بھئی ناں، رات کا چھاپہ ناں بھی ناں،پاکستان کا مطلب کیا لا الہ اللہ ، کشمیر بنے گا پاکستان کے نعرے لگاتے رہے ۔ پولیس کی جانب سے گزشتہ روز بھی دھرنے کے اطراف کے راستوں کو کنٹینرز لگا کر بند رکھا گیا جس کی وجہ سے شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا رہا ۔ حکومت کو نماز ظہر تک دی جانے والی ڈیڈ لائن مکمل ہونے کے بعد سربراہ تحریک لبیک یارسول اللہ علامہ خادم حسین رضوی منعقدہوا کی سربراہی میں اجلاس ہوا جس میں پیر محمد افضل قادری سمیت دیگر نے شرکت کی ۔ اجلاس کے شرکاء نے کہا کہ فیض آباد معاہدے پر اعلیٰ شخصیات کے دستخط ہیں، معاہدہ ختم نبوت کو جس طرح پامال کیا گیا وہ قابل مذمت ہے ۔حکومت سے مطالبہ ہے کہ وہ ہر قسم کا لیت ولعل چھوڑ کر معاہدہ ختم نبوت فیض آباد پر من و عن عمل کریں ،بدعہدی پر اللہ تعالیٰ سے اور قوم سے معافی مانگیں ۔معاہدے کے ضامن اس پر عملدرآمد کرائیں ۔ تحریک لبیک یارسول اللہ کی شوریٰ نے فیصلہ کیا ہے کہ مذاکرات کرنے والی شخصیات نے ایک دو دن میں پیشرفت کی یقین دہانی کروائی ہے اس لئے راست اقدام کو مزید دو دن کے لئے موخر کیا جارہا ہے تاہم داتادربار کے باہر جاری دھرنا دو روز تک جاری رہے گا۔مرکزی شوریٰ نے فیصلہ کیا دھرنے کے شرکاء نماز جمعہ داتا گنج بخش کی جامع مسجد میں ادا کریں گے ۔داتا دربار چوک میں بعد نماز عصرتاجدار ختم نبوت کانفرنس ہوگی جس میں ملک بھر سے علماء مشائخ اورعاشقان رسول شرکت کریں گے جہاں سربراہ تحریک لبیک یارسول اللہ علامہ خادم حسین رضوی آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کریں گے ۔مرکزی شوریٰ نے ہدایت کی کہ ملک بھر کی ضلعی تنظیمات ہر ضلعی مقام پر تاجدار ختم نبوت ریلیاں نکالیں اورکسی مرکزی مقام پر ریلی کے اختتام پر جلسہ کرکےقوم کوختم نبوت کیلئے اٹھ کھڑا ہونے کیلئے تیار کریں ۔ مرکزی شوریٰ نے افغانستان میں جلسہ دستار فضیلت میں بمباری کر کے 100سے زائد قرآن کریم کے حفاظ اوردرس نظامی سے فارغ وتحصیل طلباء اور علماء کو شہید کرنے کے واقعہ کی مذمت کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ مسلم حکمران امریکی سفیروں کو اپنے ممالک سے نکال کر امریکہ کے خلاف تمام ضروری اقدامات اٹھائیں ۔میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئےخادم حسین رضوی نے کہا کہ ہمارا واحد مطالبہ فیض آباد معاہدے پر عملدرآمد ہے اور ہم اس سے کسی صورت پیچھے نہیں ہٹیں گے۔ ہم ملک میں افرا تفری ، دھینگا مشتی یا کسی سے ٹکرانے کا ارادہ نہیں رکھتے ۔ ہمارا رزق، امن او رسکون اس ملک سے وابستہ ہے ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کے پاس اب بھی وقت ہے کہ وہ معاہدے کی پاسداری کرے بصورت دیگر ہمارے پاس ملک گیر احتجاج کے سوا کوئی چارہ نہیں ہوگا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں